Sample Karbala

کربلا …..شہادت کی اعلیٰ مثال

:Share

اسلامی سال کاآغازماہ محرم الحرام سے ہوتاہے۔امم سابقہ میں بھی اس کوماہ معظم سمجھاجاتاتھااور آج بھی ماہ ِمحرم کی عظمتوں سے کسی کو انکارنہیں اور خصوصاً یوم عاشورہ محرم کی دس تاریخ توملت اسلامیہ کاناقابل فراموش دن ہے ۔گواس کی وجہ تسمیہ میں علماء کااختلاف ہے اوراس کی وہ مختلف توجیہات بھی بیان فرماتے ہیں۔بعض کے نزدیک اللہ تعالیٰ نے جوبزرگیاں دنوں کے اعتبارسے امت محمد یہ کوعطاکی ہیں اس میں یہ دن دسویں بزرگی کاہے اوربعض کے نزدیک اللہ تعالیٰ نے اپنے مقرب انبیاء پرمختلف انعامات اسی دن فرمائے! اس حدیث سے یومِ عاشورہ کی اہمیت قدرے واضح ہوجاتی ہے کہ سیدنا ابی عباس رسول اکرم ﷺ سے روایت کرتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے عاشورہ کے دن آسمانوں زمینوں اور پہاڑوں کو پیدا فرمایا، حضرت آدم علیہ السلام کی تخلیق بھی اسی دن فرمائی، حضرت آدم علیہ السلام کی توبہ بھی اسی دن باریاب ہوئی، اسی دن ان کوجنت میں داخل فرمایاگیا۔سیدناابراہیم خلیل اللہ بھی اسی دن پیدا ہوئے،اوران کے بیٹے کافدیہ قربانی بھی عاشورہ کے دن دیاگیا۔فرعون کوبھی اسی دن دریائے نیل میں غرق کیاگیااورحضرت ایوب علیہ السلام کی تکلیف بھی اسی دن دورفرمائی گئی۔ حضرت داؤد علیہ السلام کی لغزش بھی یوم عاشورکو معاف فرمائی گئی اورحضرت عیسیٰ علیہ لسلام ابن مریم کی ولادت بھی اسی دن ہوئی اورقیامت بھی یوم عاشورہ کے دن ہی واقع ہوگی(غنیۃ الطالبین)

لیکن پاک وہنداورچنداسلامی ممالک میں محرم الحرام کی ان تمام عظمتوں کے علاوہ اس کی وجہ تسمیہ شہادتِ حسین بھی ہے بلکہ اس عظیم واقعہ کی چھاپ ہماری اسلامی تاریخ پر اس قدر زیادہ ہ ے کہ اس کے علاوہ اب عملاً ہمارے لئے کسی اور واقعے کی اتنی اہمیت ہی نہیں رہی اور نہ ہی ہم اس سے واقف ہیں۔ شہادت حسین حق کی ایسی تصویرکی نشاندہی کرتی ہے کہ اس کے مقابلے میں اس دن کی دوسری عظمتوںکانہ توہم ذکرکرتے ہیں اورنہ ہی اس کی ضرورت محسوس کرتے ہیں۔

اسلام کی روح یہ ہے کہ وہ ناحق اورباطل کے سامنے سرکٹادے لیکن ہرگزاس کوجھکنے نہ دے،اس عظیم عمل کوشہادت کہتے ہیں اوراس شہادت کی اعلیٰ ترین مثال اورتکمیل کانام بلاشبہ”شہادتِ حسین”ہے جنہوں نے چھ ہزارکے لشکر کے سامنے عام روایت کے مطابق بہتر(72)مجاہدوں کے ساتھ ٹکرلی اوران ظالم حکمرانوں کے سامنے سرجھکانے کی بجائے لڑکراپنی جاں جانِ آفریں کےسپرد کردی۔یہی وہ کردارہے جس کی بناء پرہم یوم عاشورہ کی یادمناتے ہیں لیکن تاریخ کے جھروکوں کوبغوردیکھیںتوہمیں حضرت حسن اورحضرت حسین علیہم السلام دومختلف قسم کے طریقہ کارکی علامت نظرآتے ہیں۔ہمیں جہاں حضرت حسین سیاسی طریقہ کارکے علمبردارنظرآتے ہیں وہاں حضرت حسن غیرسیاسی طریقہ کار کی حکمت کے میناردکھائی دیتے ہیں۔حضرت حسین نے حاکم وقت کے ساتھ جنگ کرکے جوسیاسی مقاصد حاصل کرنے کی کوشش کی وہاں یہی مقاصدحضرت حسن نے جنگ کے میدان سے واپسی کے ذریعے حاصل کئے۔ اس اہم اورلطیف فرق کوسمجھنے کیلئے ہمیں تاریخ کی اس تصویرکے ہرپہلو کوبڑی ایمانداری سے دیکھناہوگااوران تاریخی واقعات کوسامنے رکھ کران عظمتوں کی مینارۂ ہدائت کواپنی قوموں کی زندگی کیلئے مشعلِ راہ بناناہوگا۔

تاریخ سے ہمیں پتہ چلتاہے کہ مکہ میں قدیم زمانے سے قریش کے دوخاندان بنوہاشم اوربنوامیہ آبادتھے اوران میں خاندانی رقابت بھی چلی آرہی تھی۔لیکن جب بنوہاشم کے ایک فرزندنے نبوت کادعویٰ کیاتومخالفت میں بنوامیہ سب سے آگے تھے۔لیکن فتح مکہ(8ھ)کے بعدعرب کے دوسرے قبائل کی طرح بنو امیہ بھی دائرہ اسلام میں داخل ہوگئے اور عہد رسالت میں اورخلافتِ راشدہ میں بنو امیہ کے لائق افراد نے مختلف اسلامی عہدے بھی حاصل کئے جس کی ایک درخشاں مثال حضرت عثمان ابی عفان ہیں۔اس دورمیں(25ھ تا35ھ)میں بنوامیہ کااثرورسوخ تمام دوسرے قبائل سے کہیں زیادہ ہوگیا۔اس کے بعد جب حضرت علی ابن طالب کاانتخاب بطورامیرالمومنین ہواتواس وقت بنوامیہ نے محض شہادت عثمان کے مسئلہ کوبنیادبناکرپہلے ہاشمی خلیفہ کے خلاف پرانی رقابت کواز سر نو زندہ کر دیا جس کی وجہ سے حضرت علی کرم اللہ وجہہ کا پورا زمانہ خلافت(35ھ تا40ھ)باہمی خانہ جنگیوں اورشورش میں گزرا،اور آخر اس کی انتہاء ایک جنونی عبدالرحمان ملجم کے ہاتھوں شہادت کے ذریعے ہوئی۔

حضرت علی کی شہادت کے بعدآپ کے لختِ جگرحضرت حسن کے ہاتھ پر خلافت کی بیعت ہوئی ۔اس وقت صورتحال یہ تھی کہ صرف عراق اورخراسان کی خلافت امام حسن کے حصے میں آئی جبکہ شام،فلسطین،یمن،حجازاورمصر وغیرہ حضرت معاویہ بن ابی سفیان اموی کے زیرقبضہ تھے جنہوں نے خونِ عثمان کے مسئلے کی بناء پرحضرت علی کی بیعت سے انکارکردیاتھا۔وہ بھلااب حضرت امام حسن کوخلیفہ کیسے تسلیم کرلیتے؟ربیع الاوّل 41ھ کوصورتحال اس نوبت کوآن پہنچی کہ امام حسن کے ساتھ چالیس ہزار سے زائدمسلح افراد تھے اوردوسری طرف حضرت امیرمعاویہ کے جھنڈے تلے ساٹھ ہزارکالشکر مرنے مارنے کیلئے ایک اشارے کامنتظرتھا۔یہاں پرحضرت امام حسن کاوہ تاریخی،غیرسیاسی کردارسامنے نظرآتاہے جس کے متعلق عام قاری توکجا ہمارے دانشوراورعلماء حضرات بھی بے خبرنظر آتے ہیںاوریہی وجہ ہے کہ امام حسن کایہ عظیم کردارلوگوں کے سامنے ابھی تک کھل کرسامنے نہیں آسکا جس طرح امام حسین کی شہادت کاواقعہ ہے۔

حضرت حسن نے اپنے والد کے پانچ سالہ خلافت کے پرآشوب زمانے میں مسلمانوں کوخودبھائیوں کی تلواروں سے ذبح ہوتے دیکھاتھااس لئے باہمی خون خرابہ اورنہ ختم ہونے والے سلسلے کوہمہشہ کیلئے ختم کرنے کیلئے خودمیدان سے ہٹ گئے اورخلافت کاعہدہ حضرت امیرمعاویہ کے حوالے کرد یااگرچہ حضرت حسن حق پر تھے اورامت کے جائزخلیفہ تھے۔

اس کے بعد دوعشرے(41ھ تا60ھ)تک حالات پرسکون رہے اوراسلامی سلطنت کی سرحدوں میں بھی خاصی توسیع ہوئی ۔امیرمعاویہ کے انتقال (رجب60ھ) تک حالات بڑے پرسکون رہے لیکن جب خلافت کامسئلہ دوبارہ کھڑاہواتوامام حسین جواپنے باپ کی شہادت اوربھائی کی خلافت سے دستبرداری سے خوش نہ تھے،انہوں نے یزید کی خلافت سے اسی طرح انکارکیاجس طرح اس سے پہے حضرت معاویہ نے ان کے والد محترم حضرت علی کی خلافت تسلیم کرنے سے انکار کردیاتھا۔یہیں سے امام حسین(٤ھ تا٦١ھ)کاوہ کردارشروع ہوتاہے جس کی یاداب یوم عاشورہ کومنائی جاتی ہے۔

عتبہ بن ابی سفیان نے جب مدینے میں یزیدبن معاویہ کیلئے لوگوں سے بیعت لینے کاسلسلہ شروع کیاتوامام حسین نے معذوری کااظہارکردیااورخاموشی کے ساتھ اپنے اہل وعیال کولیکرمکہ مکرمہ تشریف لے گئے۔یہاں آپ کی آمدسے قبل مکہ کے لوگ عبداللہ بن زبیر پربیعت کرچکے تھے اوریہ صورتحال حضرت حسین کوقابل قبول نہیں تھی۔یہی وجہ ہے کہ حضرت حسین اورآپ کے اہل خانہ ان کے پیچھے نمازنہیں پڑھتے تھے جوعملاًاس وقت مکہ کے حاکم تھے۔

شہادت حضرت عثمان کے بعدحضرت علی کرم اللہ وجہہ کیلئے مکہ ومدینہ کے حالات سازگارنہیں تھے جس کی بناء پراسلامی ریاست کادارالخلافہ 36ھ میں مدینہ سے کوفہ منتقل ہوگیاتھا۔اس طرح امام حسن نے بھی خلافت سے دستبرداری کے بعد 41ھ میں کوفہ کوخیربادکہہ دیاتھااورمدینہ میں مستقل رہائش اختیارکر لی تھی۔اب جب یزیدکوخلافت ملی تواہل کوفہ کی محبت اہل بیت کیلئے جوش میں آئی اور انہوں نے خطوط کے ذریعے امام حسین کوخلافت کیلئے مجبورکرناشروع کردیا۔ امام حسن اہل کوفہ کی نفسیات اورصورتحال کی نزاکت کواچھی طرح جان چکے تھے،اسی لئے اپنے بھائی کووصیت میں اہل کوفہ کے بارے میں اپنی آراء سے آگاہ کرچکے تھے کہ: کوفہ والوں کے فریب میں مت آنااورمیں اچھی طرح جان چکاہوں کہ نبوت اور خلافت دونوں ہمارے خاندان میں جمع نہیں ہو سکتیں اس لئے تمہارے حق میں بہتریہی ہے کہ تم اس معاملے میں خاموش رہو”۔

لیکن حضرت حسین اپنے لئے ایک کردار کا انتخاب کر چکے تھے وہ تھا ”خلافت منہاج نبوت کا تحفظ” اور اس ادارے کے انہدام سے اہل اسلام کو جن مصائب کا سامنا کرنا پڑ رہا تھا اس سے بھی امت مسلمہ کے اعصاب پر بہت برا اثر پڑ رہا تھا۔ان کے سامنے شہادتِ عثمان کا واقعہ رونما ہوا،ان شورشوں نے حضرت حسین کے اعصاب پربھی بہت گہرااثرچھوڑاتھا۔اس میں شک نہیں کہ مختلف فتنوں نے پہلے اموی خلیفہ کے زمانے میں قصرِ خلافت کوبری طرح اپنے گھیرے میں لے لیاتھا۔حضرت عثمان نے بھی مسلمانوں کوباہم خانہ جنگی سے بچانے کیلئے اپنی جان قربان کردی حالانکہ اس وقت مدینے کے وفادار مسلمانوں کی جماعت آپ کے مکان پرموجودتھی اوربنوہاشم کی توایک بڑی جماعت ان کی معاون و مددگاربھی تھی لیکن حضرت عثمان نے ان سب کوقسم دلا کر اپنے مسلمان بھائیوں پرحملہ سے روک رکھاتھااوراپنے گھر بیٹھ کرقرآن کریم کی تلاوت فرماتے رہے۔دراصل وہ بھی شریعت کے حکم کی تعمیل کررہے تھے کہ:
اوراللہ کی راہ میں ان سے لڑوجوتم سے لڑیں اورزیادتی نہ کروبے شک اللہ زیادتی کرنے والوں کو پسند نہیں کرتا۔سورة بقرہ۔190

اپنی طرف سے جارحیت کاآغازبندۂ مومن کیلئے کسی طورپربھی جائزنہیں کہ مسلمان دعوت ونصیحت کے ذریعے کوئی خیرکی راہ نکالتاہے نہ کہ قتال کا راستہ اختیار کرکے،اس کے بعداگردوسروں کی طرف سے جارحیت کاآغازہوتو دوصورتیں ہیں،جارحیت کاآغازاگرکفارکی طرف سے ہوتوپھربھی مخصوص شرائط کے تحت اس کے دفاع کاحکم ہے: لَئِنْ بَسَطتَ اِلَیَّ یَدَ کَ لِتَقْتَلنِیْ مَاَنَابِبَاسِطِ یَدِیْ اِلَیْکَ لاَقتُلَکَﷺاِنِّیِ اَخَافُ اَللَّہُ رَبِّ الْعَالَمِین لیکن اگرجارحیت کاآغازاگرمسلمان کی طرف سے ہوتوایسی صورت میں حکم یہ ہے کہ دفاع کے طورپربھی اپنے دینی بھائی پروارنہ کیاجائے۔” اگر تونے مجھے مارنے کیلئے اپنے ہاتھ کوبڑھایاتومیں تجھے کومارنے کیلئے اپنے ہاتھ نہیں بڑھاؤں گا”۔ سورة المائدہ۔28

ابوموسیٰ سے روایت ہے کہ رسول اکرمﷺ نے آنے والے فتنے سے جب ڈرایاتو لوگوں نے پوچھاکہ ہم کوآ پ ﷺ کاکیاحکم ہے؟توآپﷺ نے فرمایا: اس میں اپنی کمانوں کوتوڑڈالو،اپنی تانت کوکاٹ ڈالو،اپنی تلواروں کوپتھرپر پٹک دو،اپنے گھروں کے اندربیٹھے رہو،اگرتم کومارنے کیلئے کوئی تمہارے گھرمیں گھس آئے توتم آدم علیہ السلام کے دولڑکوں میں سے بہترلڑکابنو،قتل ہو جاؤمگرقتل نہ کرو۔

یہی وجہ ہے کہ حضرت عثمان بن عفان نے اصول شریعت کی اتنی بڑی عملی مثال قائم کردی اوروہ حضرت آدم علیہ السلام کے بہتر بیٹابن گئے لیکن حضرت امام حسین کے سامنے اس عظیم المرتبت کارنامے کے بعدآنے والے واقعات نے یہ بات روزِروشن کی طرح واضح کردی کہ اگر حضرت عثمان “خلافت علیٰ منہاج نبوت”کادفاع کرتے (اوراس ادارہ خلافت کی حفاظت کی خاطرچندہزار انسان ماردیئے جاتے تویقیناً خلافت کاادارہ انتشاراورانارکی سے محفوظ رہتا اور حضرت علی جوساری توانائیوں کے باوجوداپنے دورخلافت کے پانچ سال ان شورشوں اورباہمی جنگ وجدل پرقابونہ پاسکے اوربالآخران منہ زورفتنوں نے ان کی جان لے لی)توآج خلافت کیلئے مسلمانوں میں آپس میں ایسی خونریزی نہ ہوتی اورتاریخ اسلام میں جنگ جمل اورجنگ صفین اوربعدکے سانحات کیلئے کوئی جگہ نہ ہوتی۔

اسی طرح حضرت حسن کومسلمانوں نے اپنی آزادمرضی سے بلاجبرو اکراہ خلیفہ مقررکیاتھا،وہ نہ صرف برحق خلیفہ تھے بلکہ ان کی خلافت بھی منہاج نبوت پرقائم تھی،ان کے مقابلے میں حضرت امیرمعاویہ کادعویٰ خلافت ویساہی بلاجوازتھاجیساحضرت علی کے مقابلے میں، کیونکہ خلیفہ کے انتخابات اورتقرر کا اختیاراہل شوریٰ یعنی اہل حجازکے جلیل القدرصحابہ رضوان علیہم کوحاصل تھا۔حضرت امیرمعاویہ کا شمارطلقاء میں تھا،اس لئے طلقاء کوخلافت کے تقرر میں کوئی عمل دخل حاصل نہ تھا۔حضرت معاویہ کا حضرت علی کے خلاف محاذآرائی، تصادم،اطاعت سے انکاراوربغاوت کاکوئی جوازنہ تھا۔وہ مرکزی حکومت میں بطورماتحت خدمات انجام دے رہے تھے۔ان کاشوریٰ سے کوئی تعلق نہ تھا،اس طرح حضرت علی کرم اللہ وجہہ بھی خلیفہ برحق تھے۔وہ خلافت کے ادارے کے محافظ تھے ۔ اس ادارے کے تحفظ اوردفاع کیلئے جوجنگیں لڑیں ان میں حضرت علی حق پرتھےاوران جنگوں کے نتیجے میں جوخون خرابہ ہوااس کی بھی ذمہ داری حضرت علی پرہرگزعائدنہیں ہوتی۔

حضرت حسین کواس بات کابخوبی علم تھا کہ حضرت معاویہ کے اس طرزِعمل نے حضرت حسن کوبھی اسی دوراہے پرکھڑاکردیاتھا جہاں وہ آج ہیں،یاتووہ خلافت کے ادارے کاتحفظ فرماتے یامسلمانوں کوخانہ جنگی کے منہ زورفتنے سے بچالیں۔حضرت حسن نے امن پسندی کاراستہ اختیارکرتے ہوئے مسلمانوں کوتوخانہ جنگی سے بچالیالیکن انہیں “خلافت علیٰ منہاج نبوت “ کے انہدام کا صدمہ یقیناً برداشت کرناپڑا۔اس حکمت عملی نے امت سے بڑی بھاری قیمت وصول کی اوربعد میں حضرت حسین اوراہل حجازکوبھی اس کاخمیازہ بھگتنا پڑا ۔حضرت حسین نے اپنے والدگرامی حضرت علی کوبھی خلافت کے ادارے کی حفاظت کی خاطر شہید ہوتے دیکھاتھا۔یہ الگ بات ہے کہ حضرت حسن نے ان تمام حالات کاعملی مشاہدہ کرتے ہوئے اپنے لئے غیرسیاسی طریق کارکاانتخاب کیا،اس پرنہ صرف عمل کیابلکہ اپنے بھائی کوبھی اس کی وصیت کی لیکن حضرت حسین نے اپنے لئے سیاسی طریق کارکاراستہ منتخب کرکے اپنے والد حضرت علی کی سنت پر عمل کیا۔

یہاں امام حسن کے غیرسیاسی طریق کارکی وضاحت ازحدضروری ہے۔اس کیلئے پہلے ہمیں مستنداحادیث اوراسلامی تاریخ کی بے شمار مستندکتابوں سے مدد لینا ہو گی۔یزید کے مقابلے میں جوصورتحال حضرت حسین کو پیش آئی اس سے کہیں زیادہ مشکل حضرت حسنکوحضرت معاویہ کے مقابلے میں پیش آچکی تھی مگرآپ نے اس سے مختلف ردعمل کااظہارکیاجس کانمونہ ہمیں حضرت حسین کے آخری خطبہ سے بھی ملتاہے جہاں حضرت حسین نے بھی جنگ وجدل سے بچنے کیلئے تین شرائظ پیش کی تھیں ۔طبری جلد4صفحہ 313

احادیث کی کتب میں حسنین کے بارے میں بہت سے روائتیں ملتی ہیں جن میں حضرت حسین کیلئے زیادہ تر”محبت “کاذکر ہے جونواسہ ہونے کی حیثیت سے آپ کیلئے بالکل فطری ہے اوردوسری طرف امام حسن کے بارے میں جوروایات نہ صرف سنداً زیادہ قوی ہیں بلکہ فطری محبت سے آگے کی طرف اشارہ کرتی ہیں۔مثلاً حضرت انس بن مالک فرماتے ہیں کہ:حسن بن علی سے زیادہ کوئی شخص نبی اکرمﷺ سے مشابہ نہ تھا”۔طبعی مشابہت کے علاوہ یہ ایک واقعہ بھی ہے کہ صحیح روایات میں امام حسین کیلئے کوئی پیشگی کردارکاکوئی ذکر نہیں ملتااوردوسری طرف یہ ثابت ہے کہ نبی اکرمﷺ نے امام حسن کے بارے میں ایک عظیم کردار کرنے کی پیشین گوئی ارشادفرمائی تھی ۔

حضرت ابوبکرصدیق فرماتے ہیں کہ “میں نے رسول اکرمﷺ کومنبرپردیکھاجہاں حسن بن علی اآپ کے پہلومیں تھے۔ایک بار آپﷺ لوگوں کی طرف متوجہ ہوتے اوردوسری بار ان کی طرف،اورفرماتے تھے یہ میرالڑکاہے،ہوسکتاہے کہ اللہ تعالیٰ اس کے ذریعے مسلمانوں کے دوبڑے گروہوں میں صلح کروادے ۔ (بخاری)

رسول کریم ﷺ کی یہ پیش گوئی امام حسن کی زندگی میں حرف بحرف صحیح ثابت ہوئی ۔حضرت امام حسن کی بیعت ٤٠ھ میں اس حال میں ہوئی کہ مسلمانوں کی باہمی لڑائی ابھی ختم نہیں ہوئی تھی۔بنوامیہ اوربنوہاشم کی رقابت عروج پرتھی،نہ تویہ ایک دوسرے کوختم کرسکے تھے اورنہ ہی ہارماننے کوتیارتھے ۔ حضرت حسن نے جب بیعت لی توآپ نے لوگوں سے یہ اقراربھی لیاکہ”میں جس سے جنگ کروں گاتم اس سے جنگ کروگے،جس سے میں صلح کروں گاتم اس سے صلح کروگے”۔اب حضرت حسن کی خلافت گویاحضرت معاویہ کیلئے نیاچیلنج تھی۔اس کے مقابلے کیلئے میدان میں جہاں حضرت معاویہ کاساٹھ ہزار کا لشکر دمشق سے چلتامدائن کے میدان میں پہنچاتھاوہاں امام حسن بھی اتنی ہی قوت کا لشکرکوفہ سے لیکر مقابلے میں آن کھڑے ہوئے تھے۔گویاپہاڑوں کا لشکرآمنے سامنے تھابلکہ امام حسن کے سپاہی توحضرت علی کے ہاتھ پرموت کی بیعت بھی کرچکے تھے اورلڑنے مرنے سے کم کسی چیزپربالکل آمادہ نہ تھے۔

مدائن کے میدان میں معاویہ بن سفیان نے امام حسن بن علی کویہ پیغام بھیجاکہ “جنگ سے بہترصلح ہے،مناسب یہ ہے کہ آپ مجھے خلیفہ تسلیم کرلیں اور میرے ہاتھ پربیعت کرلیں”۔امام حسن نے غوروفکرکے بعداس پیشکش کومنظورفرما لیا اورخلافت امیرمعاویہ کے سپردکردی حالانکہ امام حسن کے پرجوش حامیوں کویہ بات قبول نہ تھی۔آپ نے ایک تاریخی فقرے میں جواب دیا: خلافت اگرمعاویہ کاحق تھاتوان کوپہنچ گیا،اگرمیراحق تھاتومیں نے ان کوبخش دیا .اس صلح کے بعد حضرت امیرمعاویہ نے حضرت امام حسن کیلئے ایک لاکھ درہم سالانہ وظیفہ مقررکردیا۔حافظ ذہبی1لعبرجلد1صفحہ 48)

اس طرح امام حسن کے پیچھے ہٹ جانے سے مسلمانوں کاباہمی اختلاف باہمی اتفاق میں تبدیل ہوگیااورمدائن کامیدان اسلامی تاریخ میں جمل وصفین کے بعد تیسری خونریزی کے عنوان سے بچ گیااورمسلمانوں کی وہ قوت جوخلیفہ ثالث کے زمانے سے باہمی جنگ وجدل میں مصروف تھی اورجن کی وجہ سے اسلامی فتوحات کاسلسلہ بھی ختم ہوچکاتھا،اب دوبارہ اسلامی فتوحات کی خبریں بہم پہنچارہاتھااوراسلام کی اشاعت وتوسیع جوان خانہ جنگیوں کی وجہ سے رک گئی تھی، اس کابھی بنددروازہ جس نے کھولاوہ حضرت امام حسن ہی تھے۔حقیقت یہ ہے کہ پیچھے ہٹناسب سے بڑی بہادری ہے ۔اگرچہ بہت کم لوگ ہیں جواس بہادری کیلئے اپنے آپ کوتیارکرسکیں،بظاہر تویہ میدان سے واپسی کافیصلہ تھا، اس سے مسلمانوں کی قوت باہم مقابلہ آرائی سے بچ گئی اوراسی طاقت نے مسلمانوں کی فتوحات کاخارجی میدان میں سکہ بٹھادیا۔اگراس وقت حضرت امام حسن خلافت پراصرارکرتے توعجب نہیں مسلمان پہلی صدی ہجری میں آپس کی خانہ جنگیوں میں بربادہوجاتے اوراسلام جوآج ایک عالمگیرمذہب چین سے لیکر مراکش تک اپنی برکات سے ہمیں فیض یاب کررہا ہے اس کی شکل کچھ اور ہوتی توگویاغیرسرکاری طریق کار سے اختلاف کرنے کی ہمت پیدانہیں ہوتی کیونکہ بعد کے حالات نے حضرت حسن کے اس کردارکوبلاشبہ امت محمدیہﷺ پر ایک گراں قدراحسان ثابت کیاہے۔

لیکن اس کے ساتھ حضرت حسین کے کردار پر نگاہ ڈالیں تو ان کے بھی طریق کار کو ایسی تقویت ملتی ہے کہ جس نے “خلافت علیٰ منہاج نبوت”کے تحفظ ، دفاع اور اس کے احیاء کیلئے قربانیوں کی ایک ایسی پرعزم تاریخ رقم کی ہے جو قیامت تک مظلوموں کیلئے مشعلِ راہ ثابت ہو گی۔ حضرت امام حسین نے خلافت کے ادارے کو بچانے کیلئے کوفہ کے لوگوں کے سخت اصرار پر اپنے چچازاد بھائی حضرت مسلم بن عقیل کو کوفہ روانہ کیا، گو حضرت مسلم بن عقیل اس منصوبے سے متفق نہ تھے تاہم حضرت حسین کے اصرارپرکوفہ چلے گئے۔تاریخی کتابوں سے معلوم ہوتاہے کہ تقریباًاٹھارہ ہزار آدمی نیابتاًان کے ہاتھ پربیعت ہوچکے تھے لیکن جب یزیدکے حکم پر عبیداللہ بن زیادنے حضرت مسلم بن عقیل اوران کے کوفی میزبان ہانی بن عروہ کومحل کی چھت پر کھڑاکرکے قتل کردیاتوکوفہ والوں کو گو یا یزید کا پہلا پیغام تھا کہ حضرت حسین کی بیعت کی قیمت کیاہوگی۔اسی وقت کوفہ والے خاموش اپنے گھروں میں دبک گئے اورحضرت حسین جو کہ ان بے وفالوگوں کی قیادت کیلئے آدھے سے زیادہ سفرطے کرچکے تھے،اپنے سفرسے بالکل واپس نہ لوٹے حالانکہ مکے میں تمام جلیل القدر صحابہ رضوان اللہ علیہ اجمعین نے ان کو اس سفر سے منع کیاتھا۔عبداللہ بن عمر،عبداللہ بن عباس،عمروبن سعدبن العاص،عبدالرحمٰن بن حارث اور مکہ کے دوسرے بزرگوں نے شدت سے حضرت حسین کومنع فرمایا بلکہ حضرت عبداللہ بن زبیرنے کہاکہ آپ کوفہ جانے کی بجائے مکہ کی حکومت قبول فرمائیں۔آپ ہاتھ بڑھائیں میں سب سے پہلے آپ کے ہاتھ پر بیعت کرتاہوں ۔ عبداللہ بن جعفربن ابی طالب نے مدینہ سے خط لکھ کربااصرارمنع کیالیکن حضرت امام حسین کی اولوالعزم طبیعت اس پرکسی طورراضی نہ ہوئی،حتیٰ کہ انہوں نے حضرت عبداللہ بن عباس کی اس آخری بات کوبھی ماننے سے انکارکر دیا کہ عورتوں اوربچوں کومکہ میں چھوڑکرسفرکریں یاکم ازکم حج کے بعد روانہ ہوںجس میں صرف چنددن باقی ہیں۔

امام حسین ذوالحج60ھ کے پہلے ہفتے میں کوفہ کے راستے میں حضرت عبداللہ بن مطیہ سے جب ملے توانہوں نے بصداحترام حضرت امام حسین سے کہا:”میں آپ کوقسم دلاتاہوں کہ آپ واپس مکہ تشریف لے جائیں،اگرآپ بنوامیہ سے خلافت چھیننے کی کوشش کریں گے تووہ ضرورآپ کوقتل کرڈالیں گے اورپھر ہرایک ہاشمی ہرایک عرب اورہرایک مسلمان کے قتل پردلیرہوجائیں گے”۔لیکن حضرت امام حسین نے واضح الفاظ میں اپنے رفقاء کوبتادیاتھاکہ ان کے پیش نظر “خلافت علیٰ منہاج نبوت”کے احیاء کے سواکچھ نہیں۔اسلامی نظام اطاعت میں خلافت کی جواہمیت ہے اس سے حضرت حسین پوری طرح باخبر تھے۔ اسلامی نظام اطاعت کے استحکام کیلئے اولی الامرکے ادارہ کوجس اندازمیں رسول اکرمﷺ اورخلفائے راشدین نے قائم فرمایاتھا،اس کے تحفظ اوردفاع کیلئے حضوراکرمﷺ نے جوتاکیدفرمائی تھی وہ بھی حضرت حسین کے علم میں تھی۔معاویہ بن ابی سفیان کے مقررکردہ خلیفہ یزیدبن معاویہ نے اس ادارہ کی تعظیم اور تقدس کو ختم کرکے رکھ دیا تھا۔اس ادارہ کے انہدام سے اسلامی معاشرہ کو دینی اور سیاسی نقصان جو پہنچ رہا تھااس کو دیکھ کرحضرت حسین جیسی شخصیت کا بیٹھ جانا بڑا مشکل تھا۔

تاہم آخر وقت میں کربلا کے میدان میں حضرت حسین کوصورتحال کااندازہ ہو گیاتھا۔حضرت مسلم بن عقیل کی شہادت،کوفہ کے لوگوں کی بے وفائی،یزید کے لشکرجرارکے مقابلے میں آپ کامختصرقافلہ بظاہرپہاڑاورچیونٹی کامقابلہ لیکن حضرت حسین نہائت بہادر،جرأت مند اورانتہائی شریف النفس تھے۔وہ موت سے بالکل خوفزدہ نہیں تھے مگراپنے ساتھ نیزعورتوں اوربچوں کیلئے اپنے دل میں جذبہ رحم کی پیدائش کوروکناان کیلئے ممکن نہ تھاچنانچہ آخری دن محرم الحرام کی دس تاریخ 61ھ کربلا کے میدان میں یزیدکی فوج کے سامنے جوتقریرفرمائی وہ فصاحت وبلاغت کابے نظیر شاہکارہے ۔آپ نے دیگرباتوں کے علاوہ یہ بھی فرمایا:
عیسیٰ کاگدھااگرباقی ہوتاتوتمام عیسائی قوم قیامت تک اس کی پرورش کرتی،تم کیسے مسلمان اورامتی ہوکہ نبیﷺ کے نواسے کوقتل کرناچاہتے ہو!

دراصل کوئی دوسری قسم کامسئلہ ہوتاتوکوفی مسلمان شائدعیسائیوں سے چارہاتھ آگے ہوتے لیکن یہاں یزیدکے لشکرکے سامنے نواسہ رسولﷺ ان کے سیاسی حریف کے طورپرکھڑے تھے اورسیاسی حریف کونہ مسلمان بخشنے کوتیار ہوتے ہیں نہ عیسائی ۔وہی یزیدجس نے 64ھ میں مدینہ پرچڑھائی کی تھی اس نے مسلم بن عتبہ کوتاکیدی حکم دیاتھاکہ حضرت امام حسین کے صاحبزادے حضرت زین العابدین کاپوراپوراخیال رکھناکیونکہ وہ مدینے میں سیاسی زندگی سے الگ ہوکرمدینہ کے نواح میں الگ تھلگ زندگی گزاررہے تھے کیونکہ یزیدنے اپنے باپ سے سیاست کاایک اصول ورثے میں جولیاتھااس پربڑی سختی سے کاربند تھا:”میں لوگوں اوران کی زبانوں کے درمیان اس وقت تک حائل نہیں ہوتاجب تک وہ ہمارے اورہماری سلطنت کے درمیان حائل نہ ہوں۔(ابن تاثیرکامل جلد4صفحہ5 )

چنانچہ تاریخ بتاتی ہے کہ آخروقت میں حضرت حسین یزیدسے صلح کیلئے راضی ہوگئے تھے ۔انہوں نے یزیدکے نمائندے عبیداللہ بن زیادکے سامنے تجاویز پیش کیں:
1۔میں مکہ واپس چلاجاؤں اوروہاں خاموشی کے ساتھ عبادت الٰہی میں مشغول ہو جاؤں۔
2۔مجھے کسی سرحدکی طرف نکل جانے دوکہ وہاں کفارسے لڑتاہواشہیدہوجاؤں۔
حضرت حسین کے رویے میں تبدیلی سے یزیدکی فوجوں میں خوشی کی لہردوڑ گئی،اگرچہ کربلاکے میدان میں وہ ایک دوسرے کے خلاف صف آراء تھے،اس کے باوجودنواسۂ رسول کے احترام کایہ حال تھاکہ دونوں طرف کے لوگ مل کر نمازاداکرتے تھے اوراکثرحضرت حسین ہی کی اقتداء میں نمازاداکرتے تھے ۔ عبیداللہ بن زیادکے پاس جب یہ پیغام پہنچاتووہ بھی بغیرلڑائی کے اس عمدہ حل پر بہت خوش ہوالیکن اس کامشیرشمرذی الجوشن جوکہ حضرت حسین کاپھوپھااور انتہائی بری طبیعت کامالک تھا،اس نے عین وقت پرعبیداللہ بن زیادکاذہن پھیردیا۔ اس نے حضرت حسین کے لوٹنے کے سارے راستے بندکردیئے اوربالآخر کربلا کاوہ معرکہ جس میں عمروبن سعد نے پہل کرکے حضرت حسین کے قافلے پر پہلاتیرپھینک کراس کاآغازکیاتھاجس کاانجام حضرت حسین کی شہادت پر منتج ہوا ۔یہاں قابل ذکربات یہ ہے کہ عمروبن سعدحضرت حسین کارشتے میں ماموں اور شمرذی الجوشن پھوپھاتھا۔

تاریخ کے ان دوکرداروں پر ملت اسلامیہ قیامت تک جتنابھی فخرکرے کم ہے۔ گوحضرت حسین نے بھی آخری وقت میں حضرت حسن کے غیرسیاسی طریقہ کارکوبھی عمل میں لانے کی کوشش کی لیکن اللہ تعالیٰ کوحضرت حسین سے “خلافت علیٰ منہاج نبوت”کے تحفظ اوردفاع کاکام لیکر ان سے بے مثال قربانی لینا مقصود تھی اوران کی شہادت سے امت مسلمہ تک یہ پیغام پہنچانامقصودتھاکہ حالات کیسے ہی پرآشوب اوردگرگوں ہوں ،اسلامی نظام حکومت، اسلامی نظام اطاعت کے قیام ونفوذجوکہ ایمان کے اوّلین تقاضوں میں سرفہرست ہیں کی کوشش ہروقت،ہرزمانے میں جاری رکھنی چاہئے جب تک خلافت کے ادارہ کو مکمل اس کی اصلی شکل میں بحال نہ کرلیاجائے۔اس کے علاوہ بھی ان کرداروں میں بے شماردوسرے اسباق ہمارے لئے موجودہیں،صرف شرط یہ ہے کہ ہم خود مخلص ہوں۔
خوشاوہ آبلہ پاکارواں اہل جنوں
لٹاگیاوہ بہاروں پہ اپنی سرخیٔ خوں

اپنا تبصرہ بھیجیں

8 + 14 =