کیایہ ہے میراپاکستان؟

:Share

اگر آپ کو یاد ہو تو چند سال پہلے ہمارے موجودہ وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے بڑے تفاخر سے قوم کویہ خوشخبری سنائی تھی کہ سوئٹزر لینڈکے بینکوں نے پاکستان سے کرپشن سے لوٹی ہوئی دولت 200/ارب ڈالر کی واپسی پررضا مندی کا اظہارکر دیاہے،بس چند قانونی دستاویزات مکمل ہونے کی دیر ہے جس کے بعدیہ رقوم پاکستان کو لوٹا دی جائے گی۔اب ایک مرتبہ پھر اسحاق ڈار جب لندن سے واپس تشریف لائے تو آتے ہی اعلان کر دیا کہ وہ پاکستانی روپے کی گرتی ہوئی شرح کونہ صرف روک دیں گے بلکہ اسے 200روپے پرلا کر دم لیں گے لیکن بدقسمتی سے ان کے دونوں کھوکھے نعرے ایک دیوانے کی بڑک سے زیادہ ثابت نہ ہو سکے اورآئی ایم ایف کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کربات کرنے کابلندوبانگ دعویٰ بھی اس وقت خاک میں مل گیاجب نہ صرف آنکھیں جھکاکربلکہ پا ؤں پکڑنے سے بھی بات نہیں بن رہی تاہم نیب اورعدالتوں کے احکام پران کی جائدادکی قرقی اورمنجمداکا ؤنٹ میں کروڑوں روپے کی بحالی کاپروانہ جیب میں ڈال کرقوم کوخوشیاں لوٹانے کی بجائے خودشاداں اورفرحاں ہیں۔یقین ہوچلاہے کہ وہ دوبارہ پاکستان تشریف لائے ہی اسی لئے تھے کہ اپنے وزیراعظم اوردیگرسیاسی مقتدررہنما ؤں کی طرح ایک مرتبہ پھرعدالتوں کی کٹھالی سے امین وصادق کالقب حاصل کرکے اپنی ساری دولت پربیٹھے ہوئے سانپ کودوبارہ دودھ پلاسکیں۔

یہ کوئی نئی بات نہیں بلکہ چند برس قبل اسلامی جمہوریہ پاکستان کی مایہ نازبحری فوج کے سربراہ محتاط اندازے کے مطابق 35 لاکھ ڈالر سے زائد رقم نیوی کیلئے خریدے گئے سازوسامان میں کمیشن کے طور پر لے اڑے تھے جنہیں بعدازاں امریکاسے بلاکران سے نہ صرف یہ رقم وسول کرکے ملکی خزانے میں جمع کرواءی گئی بلکہ ایک واجبی سے سزاسناکرمعاملہ بھی رفع دفع کردیاگیا۔درجنوں مثالیں موجودہیں کہ ماضی قریب میں بھرپورکرپشن سے لوٹی ہوئی دولت سےہمہ مقتدر شخصیات کے چند ہونہار نونہال جو آج نہ صرف ارب پتی ہیں بلکہ کھلے بندوں اپنی بیش بہادولت کا بھرپور فائدہ اٹھا رہے ہیں۔کتنے ہی اعلیٰ عہدوں پر فائز سرکاری افسر،سیاستدان اور ٹیکنو کریٹ بیرونی ممالک میں دادِ عیش دے رہے ہیں،حالانکہ ان میں سے کئی ایک کے خلاف بھاری رشوت اور سنگین بد عنوانی کے مقدمات زیرِ التوا تھے جن کی این آر او کے تحت گلو خلاصی ہوئی۔چند ایک مقدر کے سکندر ایسے بھی ہیں جو دوبارہ مملکتِ خدادا د کی قسمت کے مالک بن گئے اوراب ایک مرتبہ پھراپنے خونی پنجے گاڑکراس بدنصیب قوم کاخون پینے میں مصروف ہیں۔

کچھ تو ایسے تھے جو مملکتِ خدادادپاکستان کے مالیاتی شعبے کے نگران بھی تھے اور پالیسی ساز بھی،جب تک ہوا کا رخ موافق رہا وہ سیاہ و سفید کے مالک بنے رہے۔ان کو اپنا اور ان مہربانوں کا مفاد ،جن کے وہ ممنونِ احسان تھے ،اس قدر عزیز تھا کہ ستم رسیدہ عوام کی بھلائی کا خیال تک بھلا بیٹھے،ملک تو کیا ،آنے والی نسلوں تک کو گروی رکھتے گئے۔اشرافیہ کو عیش و عشرت کی لت ڈال گئے۔ہمارے عظیم دوست چین کے عظیم ترین انقلابی قائد ماؤزے تنگ اور چو این لائی نے سادگی کواپنایا،وہ اور ان کے ساتھی سختیاں جھیلتے رہے ،جن اصولوں پر قائدین خود کاربند ہوں،عوام کیلئے ان کو دل و جان سے قبول کرنا اور ان پر بخوشی عمل کرنا نہائت آسان ہو جاتا ہے۔انقلاب کے بعد پہلی نسل کی قربانیاں رنگ لائیں اور چین اب دنیا کاایک عظیم ترین ملک بن گیا ہے۔

اورہم آج ایک مرتبپ پھر ہاتھ میں کشکول لئے پھرتے ہیں کوئی پوچھتا نہیں۔امریکا کی بارگاہ میں سر بسجود ہیں،جس کے منشی اور کارندے حکم چلاتے ہیں اور ہم بلا چوں چراں حکم بجا لاتے ہیں۔ستم بالائے ستم ان کارندوں میں سے بہت سے ہمارا ہی کھاتے ہیں اور خوب کھاتے ہیں مانگ تانگ کے۔کئی دفعہ ناک سے لکیریں کھنچ کر،جو قرضہ ہم غیر ممالک یا مالیاتی اداروں سے لیتے ہیں اس میں سے یہ “فرشتے”مشاورت اور خدمات کے نام پر بہت کچھ ہتھیا لےجاتے ہیں۔”مالِ غنیمت ” میں سے کچھ سکے وہ”مقامی ہم جولیوں”کی جھولی میں بھی ڈال دیتے ہیں تاکہ نہ صرف اصل کھیل پردوں کے پیچھے چھپا رہےبلکہ سنہری کلغیوں والے مرغانِ چمن بہار کے گیت اس وقت تک گاتے رہیں جب تک حکومت نہ بدل جائے۔

حکومت بدلتے ہی یہ موسمی مینڈک تھوڑی دیر کیلئے اس طرح خاموش ہو جائیں گے جیسے دلدل میں گھس گئے ہوں مگر جلد ہی پھر نکل آئیں گے۔راگ پھر شروع ہو گا مگر سر تال پہلے سے مختلف ۔اب خانہ بربادی کا ذکراپنے پیشرروؤں پرڈال کرخودکودیانتداری کاپیکرثابت کرتے نظرآئیں گے،ستیاناس اور بربادی کے ایسے قصے سنائیں جائیں گے کہ سننے ولا توبہ توبہ کا ورد کرتے کانوں کو ہاتھ لگائے اور سوچے کہ یہ حسین ملک کتنا بد قسمت ہے کہ اس میں بھیڑیئے نہ صرف دندناتے پھرتے ہیں بلکہ ان میں سے کئی ایک اعلیٰ مقامات تک پہنچ جاتے ہیں۔یہ طالع آزما ایسی چکنی مٹی سے بنے ہوتے ہیں کہ عوام کے اعتماد کی مقدس امانت بھی ان کی گھٹی میں پڑے حرص و ہوس کا کچھ نہیں بگاڑ سکتی،نہ صرف پوری ڈھٹائی سے وہ موقع ملتے ہی کھل کھیلتے ہیں بلکہ اپنی “جرأت و بہادری”پر فخر کرتے ہیں۔بعد میں پکڑے جائیں تو بھی اپنے کئے پر نادم ہونے کی بجائے یوں سینہ تان کر اپنا دفاع کرتے ہیں کہ اعلیٰ عدالتوں کے ججوں کو بھی یہ کہنا پڑ جاتا ہے کہ”کرپٹ عناصر شرمندہ نہیں بلکہ وہ اکڑ کر بڑے فخر کیساتھ چلتے ہیں……….ان سے کئی کئی ملین ڈالر عدالتوں کے حکم پر حکومت نے وصول بھی کئے ،اس کے باوجود وہ گالف کھیل رہے ہیں،معاشرہ کو ان سے الگ تھلگ رہنا چاہئے اور ان کا بائیکاٹ کرنا چاہئے”!

خطا تو معاشرہ کی بھی ہے۔اچھائی برائی میں تمیز کمزور پڑ جائے،عجز و انکسار کمزوری کی علامت تصور ہونے لگے،برائی سے بچنا بزدلی ٹھہرے اور چور ڈاکو رہزن کیلئے دلوں سے نفرت مٹ جائے تو کیوں نہ بھیڑیئے بھیڑوں کے گلے کے نگہبان کا کردار ادا کریں۔عموماًکہا جاتا ہے کہ انسان کی سرشت میں مضمر ہے کہ ہر انسان دل کی گہرائیوں میں نہ صرف نیکی اور بدی کا واضح احساس رکھتا ہے بلکہ وہ برائی کے خلاف جدوجہد کے جذبہ سے بھی عاری نہیں۔حالات کا جبر البتہ اسے خاموش رہنے پر مجبور کر دیتا ہے۔روزمرہ مشاہدہ اسے واضح اشارے دیتا ہے کہ خواہ مخواہ،،پنگا،،لینا سراسر حماقت ہے۔جو سرپھرے پرائی آگ میں کود پڑتے ہیں ان کے نہ صرف پاؤں جھلس جاتے ہیں ،بعض اوقات یہ تن سوزی انہیں عالمِ نزع سے عدم کی منزل تک لیجاتی ہے۔

عقلمندی،انہیں نا انصافی،ظلم اور بے رحمی سے نبردآزما ہونے کی بجائے خاموش رہنے اور بہت کچھ “پی جانے”کی ترغیب دیتی ہے،یوں ان کی قوتِ برداشت کا دائرہ پھیلتا جاتا ہے جس سے بر خود غلط ظالموں کا حوصلہ بڑھتا ہے۔وہ چنگیز خان کے لشکریوں کی طرح ہر مرغزار پر چڑھ دوڑتے ہیں۔بڑھتے ہوئے طوفان کے سامنے نہ صرف نہتے اور بے بس عوام کی طاقت جواب دے جاتی ہے بلکہ انسانیت کی روح تک ان کا ساتھ چھوڑ دیتی ہے۔آٹھوں پہر گردش کرنے والا آسمان پھر عجیب و غریب منظر دیکھتا ہے۔مفتوحہ شہر میں ایک ممتاز شہری کسی غیر مسلح تاتاری کے ہتھے چڑھ جاتا ہے،اسے وہی لیٹ جانے کا حکم ہوتا ہے جس کی بلا چوں چراں تعمیل ہوتی ہے۔تاتاری یہ کہہ کر “یہیں لیٹے رہناجب تک میں کیمپ سے تلوار لا کر تمہارا گلہ نہ کاٹ دوں”چلا جاتا ہے۔معزز شہری بے حس و حرکت پڑا رہتا ہے،نہ اسے فرار کا خیال آتا ہے ،نہ جان بچانے کی سوجھتی ہے۔کافی دیر کے بعد تاتاری آتا ہے،اس کا گلہ کاٹ دیتا ہے۔

حد سے بڑھ جانے والی سفاکی غلامی کو جنم دیتی ہے۔کوئی بھی خواہ مخواہ گردن کٹوانا نہیں چاہتا۔نہتے انسانوں کا جمِ غفیر توپ و تفنگ سے مسلح لشکر کےسامنے کیسے ٹھہر سکتا ہے،خصوصاً جب قتل عام کا اذن ہو چکا ہویا ہو سکتا ہو۔ہلاکو خان نے اہلِ بغداد کو تہ تیغ کیا تو دریا کا پانی گلرنگ ہو گیا،نادر شاہ نے دلی کی اینٹ سے اینٹ بجا دی۔گلیوں میں انسانی خون بارش کے پانی کی طرح بہنے لگا۔ 1857ء میں باربار اجڑنے والی دلی کوپھر ویسا ہی المیہ پیش آیا۔شہزادگان کی لاشیں کئی دن درختوں سے لٹکتی رہیں،ناز و نعمت میں پلے بڑھے کتنے ہی اہلِ ثروت خون کی ہولی کی بھینٹ چڑھ گئے،جو بچ رہے وہ فاتحین کی قدم بوسی کو بڑھے۔اپنی وفادای کا یقین دلانے کیلئے ایڑھی چوٹی کا زورلگایا ،تابعداری کو شرطِ استواری سے یوں سنوارا کہ وہ اصل ایمان ٹھہری۔
جسٹس مرحوم محمد رستم کیانی نے 1959ء میں دیئے گئے خطبہ یومِ اقبال میں ایک شوریدہ سر شاعر کے اس شعر کا حوالہ دیا تھا:
دیکھتا کیا ہے میرے منہ کی طرف…… قائد اعظم کا پاکستان دیکھ
جسٹس مرحوم محمد رستم کیانی اس وقت حکومت کے قانونی مشیر تھے۔ان سے رائے طلب کی گئی تھی کہ اس پر کون سی دفعہ لگتی ہے۔انہوں نے کہا تھا کہ”خدا کے بندو!وہ تو صرف یہ کہتا ہے کہ میرے منہ کی طرف کیا دیکھتے ہو،پاکستان کی طرف دیکھو،کیا یہ وہی ملک ہے جو قائد اعظم نے تراشا تھا” ……..اب تو غالباً روح پاکستان بھی اپنے “جانثاروں”سے یہ سوال کرتی ہو گی۔کیا ہم سے کوئی جواب بن پاتا ہے؟ہم میں سے کتنے ہیں جنہوں نے زندگی کے کسی لمحے میں بھی یہ سوچنے یا معلوم کرنے کی زحمت بھی گوارہ کی کہ مملکتِ خداداد پاکستان کیونکر صفحہ ہستی پر نمودار ہوا؟ بانیانِ پاکستان کے خواب کیا تھے؟آرزوئیں،تمنائیں اور آدرش کیا تھے؟بابائے قوم نے کیا سوچا تھا،کیا چاہاتھا،کون سی منزل متعین کی تھی؟ کیسے وہاں تک پہنچنا تھا؟وہ منزل کن اندھیروں میں کھو گئی،نشانِ منزل بھی کوئی دکھائی پڑتا ہے یا نہیں؟ تاریخ گواہ ہے کہ آزادی تو کبھی بھی التجاؤں اور درخواستوں سے نہیں ملی۔

صحرائے سینا میں چالیس سال تک بھٹکنے کے بعد حضرت موسیٰ کی قوم کو بھی بالآخر منزل مل گئی تھی۔ احساسِ زیاں اگر دامن گیر ہو جائے تو کیا خبرہم بھی گم گشتہ راہوں کو از سرِ نو پا لیں۔ اپنی اپنی ذات کی قید سے آزاد ہو جائیں۔ذاتی مفاد کو ہی زندگی کا واحد مقصد سمجھنا ترک کر دیں۔ملک و قوم کی فلاح و بہبود کو نہ صرف اپنافرض سمجھیں بلکہ اس کیلئے تھوڑی بہت قربانی دینے کیلئے تیار ہو جائیں ۔کیا وہ ایک نئی صبح نہیں ہوگی جب ہم میں سے کئی ایک دیوانے سچ کو برملا سچ کہنے سے نہیں ہچکچائیں گے۔کتنا ہی خوشگوار اجالا ہو گا جب جماعتی وفاداریوں سے بالا تر ہو کر، یاری دوست اور برادری کی زنجیروں سے آزاد ہو کر ہمارے اربابِ اختیار حق و انصاف کے تقاضے پورے کریں گے،قائد اعظم کے حسین چہرہ پر جمی گرد جھڑنے لگے گی۔

ایک کڑا امتحان ہے اور قوم بھی ہاتھوں میں پھندہ لئے منتظر ہے۔دیکھیں کون کون جھولتا ہے! رہے نام میرے رب کا جو علیم و خبیر ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں