Allama Iqbal's complete belief

علامہ اقبال کایقین ِکامل

:Share

برصغیرکی تقسیم جیسی زمینی حقیقت کے بعداب تاریخ کوجھٹلانے یاان حقیقی خاکوں میں جھوٹ وبدنیتی کارنگ بھرکرتاریخی واقعات کی شکل بگاڑکرنئی نسل کوگمراہ کرکے اقبال سے بد ظن کرنے کی کوشش ایسے ہی ہےجیسے چاندپرتھوکاواپس اپنے منہ پرگرتاہے۔76سال گزرنے کے بعدایک مرتبہ پھراقبال پرنہروکے اس بے جاالزام کوکیوں دہرایاجارہاہے کہ ،،اقبال اپنی زندگی کے آخری دورمیں سوشلزم کے زیرِاثرتصورِپاکستان سے دستبردارہو گئےتھے۔کیاان الزامات سے زمینی حقائق بدل سکتے ہیں کہ دوبارہ ایسااکھنڈبھارت قائم ہوجائے جہاں ہرروز کشمیراور گجرات جیسی قیامتیں مسلمانوں پر ڈھائی جائیں!اقبال جنہوں نے پاکستان جیسی ریاست کاخواب دیکھا،ان کواس الزام میں آخرکیوں ملوث کیاجارہاہے؟اورایک ہی وقت میں بھارت اور پاکستان میں ایسابے ڈھنگا راگ کیوں سنائی دے رہاہے؟پھتدونوں ملکوں کے انتخابات سے قبل تواترسے اس جھوٹ کوپھیلانے کی کیاوجہ ہے کہ سرحدپارکی زبان یہاں کے ٹی وی پر بیٹھے دانشوروں کی سڑاندبھی بھڑک اٹھتی ہے۔آئیے تاریخ کے جھروکوں سے حقائق کی دنیامیں جھانکتے ہیں:

پنڈت جی اپنی کتاب”ڈسکوری آف انڈیا”جوانہوں نے1944ءمیں قلعہ احمدنگرکے زنداں میں بیٹھ کرلکھی تھی،اس میں انہوں نے بطورشاعر اور مفکراقبال کے فیضان کی تحسین فرمائی ہے مگراقبال کوخراجِ تحسین کرتے وقت وہ یہ بھی کہہ گزرے ہیں کہ اقبال ایک شاعر،عالم اور فلسفی تھے اور پرانے جاگیرداری نظام سے وابستہ تھے”۔پنڈت جی مزیدلکھتے ہیں کہ”اقبال پاکستان کے اوّلین حامیوں میں سے تھے لیکن ایسامعلوم ہوتاہے کہ انہوں نے اس تجویزکی لغویت اوران خطرات کومحسوس کرلیاتھاجواس تجویزمیں مضمرہیں۔ایڈورڈتھامسن نے لکھاہے کہ ایک ملاقات کے دوران اقبال نے ان سے یہ کہاکہ انہوں نے مسلم لیگ کے ایک اجلاس میں صدرکی حیثیت سےپاکستان کی حمائت کی تھی مگران کویقین تھاکہ یہ تجویزمجموعی طورپر ہندوستان اورخصوصاًمسلمانوں کیلئے مضرہے۔شائدانہوں نے اپناخیال بدل دیاتھایاپہلے اس مسئلے پرزیادہ غورنہیں کیاتھاکیونکہ اس وقت تک اس نے کوئی اہمیت حاصل نہیں کی تھی۔ان کاعام نظریہ زندگی پاکستان یاتقسیمِ ہندکے اس تصورکے ساتھ جوبعدمیں پیداہوا،ہم آہنگ نہیں تھا۔آخری عمر میں اقبال کارحجان اشتراکیت کی طرف بڑھتاگیا۔سوویت یونین کی زبردست کامیابی نے ان کوبہت متاثرکیااوران کی شاعری کارخ بدل گیا۔”

پنڈت نہروکایہ الزام سراسرغلط،لاعلمی بلکہ بدنیتی پرمبنی ہے۔جن لوگوں نے اقبال کی شاعری،فلسفہ اورسیاست کاسرسری سے بھی کم مطالعہ کیاہے،وہ بھی اس صداقت کی گواہی دیں گے کہ جاگیرداری نظام کااقبال سے بڑادشمن ڈھونڈے سے بھی نہیں ملتا۔ نہروسے سب سے بڑاتاریخی سہویہ ہواکہ وہ بھول گئے کہ ان کی کتاب سےتین برس پہلے قائداعظم کے دیباچہ کے ساتھ قائداعظم کے نام اقبال کے خطوط شائع ہوچکے تھے،یہ انگریزی کتاب یقیناً نہروکی نظرسے گزرچکی ہوگی۔اس کتاب میں شامل28مئی 1937ءکاوہ طویل خط بھی شامل ہےجس میں نہروکی”بے خداسوشلزم”کوبھی زیرِ بحث لایاگیاہے اوربتایاگیاہے کہ مسلمان تورہے ایک طرف،خودہندومعاشرہ بھی”بے خداسوشلزم”کوہرگزقبول نہیں کرے گا۔پنڈت جی کی سوشلزم کوردکرتے وقت اقبال نے قائد اعظم کوبتایاہے کہ اگراسلامی شریعت کی دورِحاضرکے معاشی نظریات کی روشنی میں ازسرِنوتفسیرکی جائے تو مسلمان عوام کی روٹی روزگارکامسئلہ بہترطورپرحل ہوسکتاہے۔مسلمان کوغربت کےعذاب سےنجات دلانے کیلئے بھی یہ ضروری ہےکہ مسلمانوں کی الگ قانون سازاسمبلی ہواوریہ اسمبلی متحدہ ہندوستان کی بجائے ایک الگ خودمختار مملکت میں ہی قائم کی جاسکتی ہے۔اس خط کے مندرجات زبانِ حال سے پکارپکارکرکہہ رہے ہیں کہ:
اوّل:اقبال،نہروکی”بے خداسوشلزم”پراسلام کے اقتصادی نظام کوترجیح دیتے ہیں۔
دوم:اسلام کے اقتصادی نظام کوعہدِجدیدکے سیاق وسباق میں نافذکرنے کیلئے جداگانہ مسلمان مملکت کاقیام ضروری ہے۔
سوم:اپنی وفات سے فقط چندماہ قبل وہ قائداعظم کویہ مشورہ دے رہے تھے کہ وہ قیامِ پاکستان کوکل ہندمسلم لیگ کاسیاسی پروگرام بنالیں۔
چہارم:اس خط کے آخر میں وہ قائداعظم سے سوال کرتے ہیں کہ کیاوہ وقت نہیں آپہنچاجب ہمیں کھل کرقیامِ پاکستا ن کواپنی منزل قراردے دینا چاہئے؟

پنڈت جی دانستہ طورپراقبال کی وفات سے تین ماہ پیشترمیاں افتخارالدین کے ہمراہ جاویدمنزل میں علامہ اقبال سے جوملاقات کی تھی،اس ملاقات کی خوشگواریادوں کایہ واقعہ بیان کرناکیوں مناسب نہیں سمجھا،لیکن اسےڈاکٹرعاشق حسین بٹالوی نے اپنی کتاب “اقبال کے آخری دوسال”میں بیان کردیاہے۔محترم بٹالوی صاحب لکھتے ہیں:
“پنڈت نہرواس زمانے میں زورشورسے سوشلزم کاپروپیگنڈہ کرنے میں مصروف تھے،انڈین نیشنل کانگرس کے دواجلاسوں کے وہ صدررہ چکے تھے اوردونوں مرتبہ اپنے خطباتِ صدارت میں انہوں نے کہاتھاکہ ہندوستان کے تمام مصائب کاعلاج سوشلزم ہے لیکن کانگرس کے بڑے بڑے لیڈروں میں کوئی شخص بھی اس بارے میں پنڈت نہروکامعاون یاہم خیال نہیں تھابلکہ سردارپٹیل،راج گوپال اچاریہ اورستیہ مورتی نے توعلی الاعلان پنڈت نہرو کے اس عقیدے سے اختلاف کااظہارکیاتھا۔دورانِ ملاقات میں ڈاکٹر صاحب نے پنڈت نہروسے پوچھاکہ سوشلزم کے بارے میں کانگرس کے کتنے آدمی آپ کے ہم خیال ہیں؟ پنڈت جی نے جواب دیا کہ،نصف درجن کے قریب،۔ڈاکٹرصاحب نے فرمایا”تعجب ہے،خودآپ کی جماعت میں آپ کے ہم خیالوں کی تعداد صرف نصف درجن ہے،ادھر آپ مجھ سے کہتے ہیں کہ میں مسلمانوں کوکانگرس میں شامل ہونے کامشورہ دوں،توکیامیں دس کروڑمسلمانوں کوچھ آدمیوں کی خاطرآگ میں جھونک دوں؟”۔اس پرپنڈت جی خاموش ہوگئے”۔

پنڈت جی نےاسی ملاقات میں پیش آنے والے ایک اہم ناگوارواقعہ کواپنی قوم سے چھپایا،ہاں البتہ بٹالوی صاحب نے بیان کردیاہے۔
“ابھی ان دوعظیم المرتبت انسانوں کے ساتھ گفتگوجاری تھی کہ یکایک میاں افتخارالدین بیچ میں بول اٹھے کہ ڈاکٹرصاحب!آپ مسلمانوں کےلیڈر کیوں نہیں بن جاتے؟مسلمان مسٹرجناح سے زیادہ آپ کی عزت کرتے ہیں،اگر آپ مسلمانوں کی طرف سے کانگرس کے ساتھ بات چیت کریں تونتیجہ بہترنکلے گا۔ڈاکٹرصاحب لیٹے ہوئے تھے،یہ سنتے ہی غصے میں آگئے اوراٹھ کربیٹھ گئے اورانگریزی میں فرمایا:تواچھا،یہ چال ہے کہ آپ مجھے بہلا پھسلاکرمسٹر جناح کے مقابلے میں کھڑاکرناچاہتے ہیں،میں آپ کوبتادیناچاہتاہوں کہ مسٹرجناح ہی مسلمانوں کے اصل لیڈرہیں اورمیں توان کامعمولی سپاہی ہوں”۔اس کے بعدڈاکٹرصاحب بالکل خاموش ہوگئے اورکمرے میں تکدرآمیزسکوت طاری ہوگیا۔پنڈت نہرونے فوراًمحسو س کرلیاکہ میاں افتخار کے دخل درمعقولات نے ڈاکٹرصاحب کوناراض کردیاہے اوراب مزیدگفتگو جاری رکھنابے سودہے،چنانچہ وہ اجازت لیکررخصت ہوگئے۔

حیرت یہ ہے کہ انہوں نے ان ناقابلِ فراموش یادوں کوتوآسانی سے فراموش کردیامگرایڈورڈتھامسن کی گپ شپ کوناقابلِ تردید تاریخی صداقت کا درجہ دے دیاجنہیں خودان کے ساتھی متعصب قراردے چکے ہیں۔ایڈورڈتھامسن آکسفورڈیونیورسٹی میں بنگالی زبان کے استادتھے اورتاریخ ہندسے بھی علمی شغف رکھتے تھے۔وہ دومرتبہ برطانیہ کے اخبارمانچسٹرگارڈین کے نامہ نگا رکے روپ میں بھی برٹش انڈیاآئے تھے۔گاندھی،رابندرناتھ ٹیگور، راج گوپال اچاری،سرادرپٹیل اورنہروکے ساتھ ان کے گہرے دوستانہ تعلقات تھے جہاں وہ ہمیشہ مسلم لیگ کی مخالفت میں سرگرم رہتے تھے،وہاں کانگرس کی پرجوش وکالت کاکوئی موقعہ بھی ہاتھ سے نہیں جانے دیتے تھے۔

جس روایت کاسہارالیکرپنڈت جی نے اقبال پرالزام تراشی کی ہے وہ ایڈورڈتھامسن اورعلامہ اقبال کی زبانی گفتگوپرمبنی ہے۔ ایڈورڈ تھامسن کایہ بیان قائداعظم کے نام اقبال کے متذکرہ بالاخطوط کی دستاویزی شہادت کے ساتھ ساتھ اقبال نہروملاقات کے مندرجہ بالااحوال ومقامات کی بنیادپر صریحاً جھوٹ ثابت ہوتاہے۔اقبال آخردم تک اپنے تصورِپاکستان کوقیامِ پاکستان کی صورت میں جلوہ گردیکھنے کی تمنامیں سرشاررہے۔قائداعظم کے ایک ادنیٰ سپاہی کی حیثیت میں سرگرمِ عمل رہے اوراسلامیانِ ہندکویہ مشورہ دیتے رہے کہ میری زندگی کی دعائیں مانگنے کی بجائے محمدعلی جناح کی طویل زندگی کی دعائیں مانگو،صرف جناح ہی قوم کی کشتی کوساحل ِمرادتک پہنچانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔نہ معلوم یہ باتیں پنڈت جی کے ذہن سے کیوں محوہو گئی تھیں یاانہوں نے ان ناخوشگوارباتوں کواپنی سیاسی آئیڈیالوجی کی تردیدسمجھ کراپنی کتاب میں درج کرناکیوں مناسب نہیں سمجھا؟:
نگاہ بلند،سخن دلنواز،جاں پرسوز
یہی ہے رختِ سفرمیرِکارواں کیلئے

اس کی وجہ صرف اورصرف یہی تھی کہ علامہ اقبال ہمیشہ یہ فرماتے تھے کہ میرے نبی ﷺ کا مبارک فرمان ہے کہ تم میں بہتروہ شخص ہے جس کے اخلاق بہترین ہیں۔اسی لیے نظریاتی اختلاف کے باوجودعلامہ اقبال اورنہروکے درمیان ہمیشہ باہمی احترام کے تعلقات قائم رہے۔نہرونے1933ء میں لندن کی گول میزکانفرنس میں مسلمان مندوبین کے طرزِفکرو عمل کوتنقیدکانشانہ بنایاتھا۔ گاندھی جی کے اس رویہ کی حمائت میں نہروکی لب کشائی پراقبال حیرت زدہ رہ گئے کیونکہ اقبال اس کانفرنس میں شریک تھے مگرنہروشریک نہیں تھے۔کانگرس کی نمائندگی گاندھی جی نے کی تھی۔ گاندھی جی نے واپسی پرکہاکہ انہوں نےذاتی طورپر مسلمانوں کے تمام مطالبات کوقبول کرلیاتھامگرسیاسی رجعت پسندی کی بناءپرمسلمانوں نے کانفرنس کوناکام بنا دیا ۔نہرونے گاندھی جی کی باتوں میں آکرمسلمان مندوبین کے خلاف ایک انتہائی سخت سیاسی بیان داغ دیاچنانچہ علامہ اقبال نے گاندھی جی کے اس الزام کی تردید میں نہروکوجوخط تحریر کیااس میں علامہ کااخلاق ملاحظہ فرمائیں:

“میں پنڈت جواہر لال نہروکے خلوص اورصاف گوئی کی ہمیشہ سے قدرکرتارہاہوں۔مہاسبھائی معترضین کے جواب میں جوتازہ ترین بیان انہوں نے دیا ہے اس سے خلوص ٹپکتاہے اوریہ چیزآج کل کے ہندوستانیوں میں کمیاب ہے لیکن ایسامحسوس ہوتاہے کہ پچھلے تین سالوں میں جوگول میز کانفرنسیں لندن میں منعقدہوئی ہیں،ان میں شریک ہونے والے مندوبین کے رویہ کے متعلق پنڈت جی کی تحقیق کی بنیادکسی تعصب پرمبنی ہے”۔اس خوش گمانی کے اظہارکے بعدعلامہ اقبال نے اصل حالات کوبے نقاب کرتے ہوئے بتایاکہ”گاندھی جی نے مسلمانوں کے مطالبات کوذاتی طورپرماننے کاعندیہ تودیاتھامگرساتھ ہی یہ بھی واضح کردیاتھاکہ وہ اس بات کی حتمی ضمانت نہیں دے سکتے کہ کانگرس کی مجلسِ انتظامیہ بھی ان مطالبات کوتسلیم کر لے گی،ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی بتادیاتھاکہ کانگرس انہیں ان مطالبات کے سلسلے میں مکمل اختیار دینے کیلئے کبھی بھی رضامند نہیں ہوگی، گویاعملاً گاندھی جی نے مسلمانوں کے تمام مطالبات کوردکردیاتھا۔گاندھی جی کی دوسری غیرمنصفانہ شرط یہ تھی کہ مسلمان اچھوتوں کے مخصوص مطالبات کی حمائت ترک کردیں مگر مسلمانوں نے اچھوتوں کی حمائت سے دستبرداری سے انکارکرکے نسل پرست گاندھی جی کو ناراض کردیاتھا”۔چنانچہ اپنے اس خط میں انہوں نے یہ سوال اٹھایاکہ:

“اپنے زبانِ زدِعام سوشلسٹ خیالات کے پیشِ نظرپنڈت جواہرلال نہرواس انسانیت کش شرط کی کیسے حمائت کریں گے؟کم ازکم انہیں یہ زیب نہیں دیتاکہ وہ مسلمانوں کوسیاسی معاملات میں رجعت پسندی کاالزام دیں۔اس صورت میں میں وہ لوگ جوہندوؤں کے فرقہ پرستانہ مقاصدکواچھی طرح سمجھتے ہیں،اس نتیجے پرپہنچنے میں حق بجانب ہوں گے کہ پنڈت جی فرقہ وارانہ فیصلے کے خلاف ہندومہاسبھاکی جاری کردہ مہم میں ایک سرگرم رکن ہیں”مسلمانوں کے خلاف نہروکادوسراالزام یہ تھاکہ مسلمان ہندوستانی قومیت کے مخالف ہیں۔اس کے جواب میں علامہ اقبال نے فرمایا:”اگرقومیت سے ان کی مرادیہ ہے کہ مختلف مذہبی جماعتوں کوحیاتاتی معنوں میں ملاجلاکرایک کردیاجائے توپھرمیں ہی اس نظریہ قومیت سے انکارکا مجرم ہوں۔میں پنڈت نہروسے ایک سیدھاساسوال کرناچاہتاہوں،جب تک اکثریت والی قوم دس کروڑکی اقلیت کے کم سے کم تحفظات کوجنہیں وہ اپنی بقاءکیلئے ضروری سمجھتی ہے،نہ مان لے اورنہ ہی ثالث کافیصلہ تسلیم کرے بلکہ واحدقومیت کی ایسے رٹ لگاتی رہے جس میں صرف اس کااپناہی فائدہ ہے،ہندوستان کامسئلہ کیسے حل ہوسکتاہے؟اس سے صرف دوصورتیں نکلتی ہیں،یاتواکثریت والی ہندوستانی قوم کویہ مانناپڑے گاکہ وہ مشرق میں ہمیشہ ہمیشہ کیلئے برطانوی سامراج کی ایجنٹ بنی رہے گی یاپھرملک کومذہبی،تاریخی اورتمدنی حالات کے پیشِ نظراس طرح تقسیم کرناہوگاکہ موجودہ شکل میں انتخابات اورفرقہ وارانہ مسئلہ کاسوال ہی نہ رہے”۔

جواب میں دیاگیاعلامہ اقبال کایہ بیان یقینی طورپرنہروکی نظروں سے گزراہوگا،اس بیان میں روزِاوّل تاآخراقبال کاترقی پسند، وسیع النظراورانسان دوست مسلک نمایاں ہے۔یہ بیان تصورِ پاکستان کی نفی سے نہیں بلکہ اثبات سے عبارت ہے۔ایسے میں نہروکا یہ کہناکہ1930ءکے بعداقبال اپنے تصورِپاکستان سے دستبردارہوگئے تھے،دیانت داری پرمبنی نظرنہیں آتابلکہ تاریخی حقیقت پر تعصب کی چادرڈالنے کے مترادف ہے۔آئیے مستند تاریخی حوالوں سے کچھ اورپوچھتے ہیں:

جب نہرونے”ماڈرن ریویو”(کلکتہ)میں دنیائے اسلام کی صورتحال پرتین مضامین میں وطنیت اورلادینیت کے فروغ کاخیرمقدم کیا تھاتواس کے جواب میں اقبال نے بھی”ماڈرن ریویو”(کلکتہ)ہی میں پنڈت جی کی فکری گمراہی کوراست فکری میں بدلنے کاسامان کیا۔اپنے طویل مضمون کے آغاز میں اقبال نے برملاکہا:”میں اس بات کوپنڈت جی اورقارئین سے پوشیدہ نہیں رکھناچاہتاکہ پنڈت جی کے مضامین نے میرے ذہن میں احساسات کا ایک دردناک ہیجان پیداکردیاہے۔جس اندازمیں انہوں نے اپنے خیالات کااظہارکیاہے اس سے ایک ایسی ذہنیت کاپتہ چلتاہے جس کوپنڈت جی سے منسوب کرنامیرے لئے دشوارہے۔وہ اپنے دل میں مسلمانانِ ہندکے مذہبی اورسیاسی استحکام پسندنہیں کرتے۔ہندوستانی قوم پرست جن کی سیاسی تصوریت نے احساسِ حقائق کوکچل ڈالاہے اس بات کوگوارانہیں کرتے کہ شمال مغربی ہند کے مسلمانوں میں احساسِ خود مختاری پیدا ہو”۔

قارئین!ذراغورفرمائیں کہ اقبال کایہ تجزیہ کہ”پنڈت جی کی سیاسی تصوریت نے احساسِ حقائق کوکچل ڈالاہے”وقت نے بہت جلد سچ ثابت کردکھایا، جب پنڈت جی کے دل میں برصغیر کی زندگی کے ٹھوس حقائق کااحساس جاگ اٹھاتومولاناابوالکلام کی خدمت میں حاضر ہوئے اور انہیں بھی ٹھوس حقائق یعنی قیامِ پاکستان کی حقیقت کوقبول کرنے کامشورہ دینے لگے۔مولانا آزاداپنی تصنیف”انڈیا ونزفریڈم”میں رقمطرازہیں:
“After a few days Jawaharlal came to see me again. He began with a long preamble in which he emphasized that we should not indulge into wishful thinking, but face reality. Ultimately he came to the point and asked me to give up opposition to partition.”
“کچھ دنوں کے بعدجواہرلال مجھ سے دوبارہ ملنے آئے۔انہوں نے ایک طویل تمہیدکے ساتھ شروعات کی جس میں انہوں نے زور دیاکہ ہمیں خواہش مندانہ سوچ میں مبتلانہیں ہوناچاہئے بلکہ حقیقت کاسامناکرناچاہئے۔بالآخروہ اس بات پرآئے اور مجھ سے تقسیم کی مخالفت ترک کرنے کوکہا”۔

اسلامیانِ ہندنے1946ءکے انتخابات میں اپنے ووٹ کے ذریعے نہرواورگاندھی کے سیاسی خواب پرستوں کوزندگی کے جن حقائق کااحساس دلایاتھا، اقبال نے برسوں پہلے نہروکوان حقائق کی جانب متوجہ کرتے ہوئے کہاتھاکہ”سیاسی تدبرکاتقاضہ یہ ہے کہ زندگی کے حقائق سے فرارکرنے کی بجائے ان کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کران سے پنجہ آزماہواجائے”۔اپنے زیرِنظرمضمون میں بھی علامہ اقبال نے جداگانہ مسلمان قومیت کے سوال پردوٹوک اندازمیں اظہارِخیال کیاتھا۔اقبال نے اسلامیانِ ہندکے سیاسی مسلک پران الفاظ میں روشنی ڈالی تھی:
“اگرقومیت کے معنی حب الوطنی اورناموس وطن کیلئے جان تک قربان کردینے کے ہیں توایسی قومیت مسلمانوں کے ایمان کاجزو ہے۔اس قومیت کا اسلام سے اس وقت تصادم ہوتا ہے جب کہ وہ ایک سیاسی تصوربن جاتی ہے اوراتحادانسانی کابنیادی اصول ہونے کادعویٰ کرتی ہے اوریہ مطالبہ کرتی ہے کہ اسلام شخصی عقیدے کے پس منظرمیں چلاجائے اورقومی زندگی میں ایک حیات بخش عنصرکی حیثیت سے باقی نہ رہے،جداگانہ مسلمان قومیت کا سوال صرف ان ممالک میں پیداہوتاہے جہاں مسلمان اقلیت میں ہیں اورجہاں قومیت کایہ تقاضہ ہے کہ وہ اپنی ہستی کومٹادیں۔جن ممالک میں مسلمان اکثریت میں ہیں اسلام قومیت سے ہم آہنگی پیداکرلیتاہے کیونکہ یہاں اسلام اورقومیت عملاًایک ہی چیزہے۔میں یقین کامل کے ساتھ کہہ سکتا ہوں کہ اسلامیانِ ہندکسی ایسی سیاسی تصوریت کاشکارنہیں بنیں گے جوان کی تہذیبی وحدت کاخاتمہ کردے گی،اگران کی تہذیبی وحدت محفوظ ہو جائے توہم اعتماد کر سکتے ہیں کہ وہ مذہب اورحب الوطنی میں ہم آہنگی پیداکرلیں گے”۔

علامہ اقبال کایقین ِکامل بالکل درست نکلا،اسلامیانِ ہندنے بالآخرمتحدہ ہندوستانی قومیت کے سیاسی تصورکوغلط ثابت کرتے ہوئے جمہوری عمل کے ذریعے پاکستان قائم کرلیا۔ان کی تہذیبی وحدت محفوظ ہوگئی اوریوں پاکستان میں اسلام سے عشق اوروطن سے محبت میں کوئی تضادباقی نہ رہا۔اب ہمارا دین اسلام ہے اورہمارا وطن دارلسلام ہے اوردوسری طرف آپ نہروکی صداقت کااس بات سے اندازہ لگالیں کہ ساری دنیاکے سامنے انہوں نے تحریری طورپراس بات کااعتراف کیاکہ وہ کشمیریوں کوحق خودارادیت دیں گے لیکن خودہی اپنی تحریرسے منحرف ہوگئے اوراس وعدہ خلافی نے ان کی ساری شخصیت کابھرم طشت ازبام کردیاہے! علامہ کایہ شعرکتناحسبِ حال ہے:
اپنے بھی خفامجھ سے بیگانے بھی ناخوش
میں زہرِہلاہل کوکبھی کہہ نہ سکا قند
رہے نام میرے رب کاجوحق سچ ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

eleven + 16 =